新疆的综合治理具有典型意义 Typical significance for the comprehensive governance in Xinjiang سنکیانگ میں جامع حکمرانی کی اہمیتby Muhammad Abdul Mateen Hashmi(马丁)

0
تھورھونگ چیانگ کی
تھورھونگ چیانگ کی "وبا "سے بچنے کی کہانی

3月18日,国务院新闻办发表了《新疆的反恐、去极端化斗争与人权保障》白皮书。不久前,笔者前往新疆实地调研了十余天时间,因此对白皮书中阐述的一些观点和内容深有感触。正如白皮书所说,面对恐怖主义、极端主义的现实威胁,新疆采取果断措施,依法开展反恐怖主义和去极端化斗争,有效遏制了恐怖活动多发频发势头,最大限度保障了各族人民群众的生存权、发展权等基本权利。

The State Council Information Office published a white paper on Anti-terrorism, De-extremism and Human Rights Protection in Xinjiang on March 18th. Recently, the author did field research for ten days in Xinjiang, so I was deeply touched by some of the ideas and contents elaborated in the white paper. As the white paper says, in face of the real threat of terrorism and extremism, Xinjiang has taken decisive measures to fight against terrorism and de-extremism in accordance with the law, which effectively curbed the frequent occurrence of terrorist activities and maximized protection the rights to life and development of all ethnic groups.

ریاستی کونسل انفارمیشن آفس نے 18 مارچ کو سنکیانگ میں انسداد دہشت گردی اور انسانی حقوق کے تحفظ پر ایک واءٹ پیپر شائع کیا. حال ہی میں، مصنف نے سنکیانگ میں دس دن کے لئے فیلڈ ریسرچ کی ہے، لہذا میں نے کچھ خیالات اور مواد کو تفصیلا بیان کیا ہے. جیسا کہ واءٹ پیپر میں بیان کیا ہے کہ،سنکیانگ کو دہشت گردی اور انتہاپسندی کے حقیقی خطرے کے سامنا، تمام نسلی گروہوں کی زندگی اور ترقی کے لئے سنکیانگ نے دہشت گردی اور انتہاپسند کے خلاف لڑنے کے لئے فیصلہ کن اقدامات کئے ہیں جس کے مطابق قانون سازی کے مؤثر طریقے سے عملدرآمد اور حقوق کو زیادہ سے زیادہ تحفظ فراہم کیا گیا ہے

新疆现代化不可或缺

Modernization for Xinjiang is indispensable

سنکیانگ کے لئے جدیدیت ناگزیر ہے

在这次调研中,笔者印象最深刻的是,当问起政府建设住房让游牧民定居的政策,会否让他们因失去诗意的生活而感到惋惜时,笔者受到一个哈萨克族女青年善意的嘲讽。她指着连绵的天山说,“如果你是山上的牧民,你也希望定居下来。骑着马儿去放羊,是你们内地城里人的想法。谁愿意一年搬四次家呢”?这件事的启示在于:新疆少数民族地区绝大多数人对政府采取的措施是欢迎的,而外界关于新疆侵犯人权,强制改变少数民族宗教信仰和生活习惯等批评,大多靠想象或依据某种自私的欲望作出,和实际情况是有很大距离的。

In this survey, I was deeply impressed by the fact that whether the government’s policy of building a house for nomads to settle down would make them feel regretful for losing the nomadic life. I was ridiculed by a Kazakh young woman. She pointed to the Tianshan and said, if you were a herdsman on the mountain, you would also want to settle down. It is a good idea for people who living in cities to ride a horse to herd sheep, but no one wants to move house four times a year. The inspiration is that the measures taken by the government is popular with the vast majority of people in ethnic minority areas in Xinjiang. The criticisms on violations of human rights, the forced change of religious beliefs and living habits of ethnic minorities in Xinjiang are mostly based on imagination or on the basis of certain selfish desires. It is quite different from the actual situation.

اس سروے کے مطابق،  میں بہت زیادہ متاثر ہوا کہ حکومتی پالیسی کے مطابق تمام بے گھر افراد کو گھر مہیا کیے جاہیں گے اور وہ اپنی خانہ بدوشی کی زندگی چھوڑ کر گھروں میں آباد ہوں  میں نے ایک قازق نوجوان خاتونن  سے ازراہ مزاق کہا. اس نے تیھان شن  کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ، اگر آپ اس پہاڑ پر گلہ بانی کرتے ہیں، تو آپ یہاں گھر بھی بنا سکتے ہیں . یہ ایسے لوگوں کے لئے ایک اچھا خیال ہے جو شہروں میں رہتے ہیں جو گھوڑ سواری کرتے اور بھیڑیں چراتے ہیں لیکن کوئی بھی ایک سال مِیں چار دفعہ  گھر تبدیل کرتے ہیں. حکومت کی طرف سے اٹھائے گئے اقدامات سنکیانگ میں نسلی اقلیت کے علاقوں کے لوگوں میں  بہت زیادہ مقبول ہو رہے ہیں. انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر تنقید، سنکیانگ میں مذہبی اقلیتوں کی مذہبی اقلیتوں کی اجتماعی تبدیلیوں اور نسلی اقلیتوں کی رہنے والی عادات زیادہ ترخیالات پر مبنی ہیں یا بعض خود غرض  خواہشات کی بنیاد پر ہیں. اصل صورتحال سے یہ بالکل مختلف ہے

客观说,新疆已经落在了中国现代化进程的后面。如果没有西部落后地区的现代化,国家的进步是不全面的。而要在如此广阔的范围内彻底改变经济、文化和社会事业普遍落后的状态,必须以国家秩序作为促进发展的首要选择。

Objectively speaking, Xinjiang has fallen behind the process of Chinese modernization. The national progress is not comprehensive without modernization in the backward areas of the western China. To completely change the generally backward state in such a broad scope of economic, cultural and social undertakings, it is the primary choice for promoting development under the national order.

حقیقت میں سنکیانگ دیگر چین کے مقابلے میں ترقی میں پیچھے گیا ہے. مغربی چین کے پسماندہ علاقوں کی ترقی کے بغیر جامع قومی ترقی  ممکن نہیں ہے.عمومی طور پر  ریاست کے پسماندہ حصوں کی معاشی، ثقافتی اور سماجی کاموں کو مکمل طور پر تبدیل کرنے اور ترقی کو فروغ دینے کے لئے کے لئے قومی آرڈر کے تحت  کام کرنا ضروری ہے

就一个省区而言,新疆占中国国土面积的六分之一。中国56个民族中47个在新疆有分布。陆地边境线5600公里,和俄、哈、吉、塔、巴、蒙、印、阿8个国家接壤。这里的文化、民族、宗教、文字都极具多样性,内外环境异常复杂。

历史上,新疆以维吾尔族为主体的多个少数民族以游牧为业,他们分散在天山南北荒寒的高原和干旱的大漠中。有些少数民族居住区交通极其不便,经济不发达,教育落后。许多人不仅本民族语言没有学好,国家通用语言也没有学好。他们对外界的事物知之甚少,缺少对国家的认同感。有些人只知有神的世界,不了解人的世界。只知有教,不知有国。只知有教规,不知有法律。有些人把自己收入的大部分捐献给神职机构,认为除此之外,他们没有别的选择。那时宗教信仰和宗教秩序主导着近乎一切,而这种状态的形成又为宗教极端分子的渗透提供了可乘之机,他们通过强化这种状态为自己制造生存空间。

As the biggest province, Xinjiang accounts for one-sixth of Chinese land area and 47 ethnic groups are distributed in Xinjiang. The land border is 5,600 kilometers, bordering Russia, Kazakhstan, Kyrgyzstan, Tajikistan, Pakistan, Mongolia, India and Afghanistan. The culture, ethnicity, religion and character here are extremely diverse, and the internal and external environment is extremely complicated.

سنکیانگ رقبے کے لحاظ سے چین کا سب سے بڑا صوبہ ہے، سنکیانگ بلحاظ رقبہ چین کے چھٹے حصےپر مشتمل ہے اور 47 نسلی گروہوں کو تقسیم کیا جاتا ہے. زمینی سرحد 5600 کلومیٹر ہے، روس، قازقستان، کرغیزستان، تاجکستان، پاکستان، منگولیا، بھارت اور افغانستان کی سرحدوں سے ملتی ہیں. یہاں ثقافت، قومیت، مذہب اور کردار انتہائی متنوع ہے، اور اندرونی اور بیرونی ماحول انتہائی پیچیدہ ہے.

Historically, Uyghur, the major ethnic minority and other minorities have been pursuing the nomadic life, and they are scattered in the deserted plateau and arid deserts of the Tianshan Mountains. The residential areas for some ethnic minorities are extremely backward in transportation, economy and education. Many people did not learn well both in their own languages and the national language, they even know very little about the outside world and lack a sense of identity with the country. Some people only know the world of God but do not understand the world of human. Even more ridiculous is that some people just know religion groups and rules, but without any awareness of laws. Some people donate a large amount of their income to the clerics because they have no other choice in their mind. At that time, religious belief and orders dominated almost everything, and this situation provided an opportunity for the penetration of religious extremists, it also help them to create a living space for themselves by strengthening this state.

 

ایغور بڑے نسلی اقلیت ہے ، دیگر اقلیتں خانہ بدوشی

کی  زندگی کی گزار رہی ہیں ، اور وہ تھیان شن کے پہاڑوں اور  سطح مرتفع ریگستان کے ارد گرد گلہ بانی کرتی ہیں. کچھ نسلی اقلیتں رہائشی علاقوں سے دور نقل و حرکت، معیشت اور تعلیم میں بہت پیچھے ہے. بہت سے لوگوں نے اپنی زبان اور قومی زبان دونوں کو اچھی طرح سے نہیں سیکھا، وہ باہر کی دنیا کے بارے میں بہت کم جانتے ہیں اور ملک کے ساتھ شناخت کا احساس تک نہیں رکھتے. کچھ لوگ صرف مذہبی گروہوں اور قواعد کو جانتے ہیں، لیکن ملکی قوانین کے بارے میں بے خبر ہیں. کچھ لوگ علماء کو ایک بڑی رقم عطیہ کر دیتے ہیں کیونکہ ان کے دماغ میں کوئی دوسرا انتخاب نہیں ہے. اس وقت، مذہبی عقائد اور احکامات تقریبا ہر چیز پر غلبہ رکھتے تھے، اور اس صورت حال نے مذہبی انتہاپسندوں کو ان تک رسائی کا موقع فراہم کیا ہے۔ یہ صورت حال ان کو اس ریاست میں رہنے کے لے مضبوط جگہ فراہم کرتی ہے

从世界范围看,2003年以来人们已经从伊拉克得出苦涩的教训:政府必须把国家服务提供给公众,并承担其政治和安全职能,才能让国家恢复秩序走向稳定。新疆在治理上所采取的措施,就是力避因缺乏民族团结和良好的政府领导致使国家秩序崩溃的经历在这个地区重演。

From a global perspective, people have drawn a bitter lesson from Iraq since 2003, so the government must provide state service to the public and assume its political and security functions in order to stabilize the national order. Measures were taken in Xinjiang to avoid a repeat of the tragedy experience of the state order caused by the lack of national unity and effective government leadership.

عالمی تناظر میں لوگوں نے عراق میں 2003 میں یہ تلخ سبق سیکھا  ہے، کہ حکومت کو عوام کے لئے ریاستی خدمت فراہم کرنا چاہیے اور ریاستی بالادستی کو مستحکم کرنے کے لۓ ریاست کو امن و امان اور تحفظ فراہم کرنا ہو گا.سنکیانگ میں حکومت نے دوبارہ کسی سانحے سے بچنے کے اہم اقدامات کئےہیں

与强调秩序相伴随的是新疆采取了许多大幅度改善民生的措施。新疆正在开展农牧民安居工程,游牧民定居工程,并利用职业技能教育培训中心,让那些虽然接受了极端思想但未构成犯罪的人放下仇恨回归社会,使与现代性相伴随的富足和繁荣出现在这一地区。现代性也包括社会生活和社会的组织模式。更符合未来的社会结构和道德规范,将是新疆走向更大成功的基础。

Concomitant with the emphasis on order, Xinjiang has taken many measures to substantially improve people’s livelihood, including the peasants and herdsmen housing project and nomadic settlement project. Other than this, the government provides opportunity for those who have accepted the extreme ideas but did not constitute a crime to accept training in the vocational skills education and training center, and help them to put down hatred and return to society, so that the development and prosperity accompanying modernity appear in this area. Modernity also includes the social life and organizational model of society. The future social structure and ethics will be the basis for the greater achievements in Xinjiang.

سنکیانگ میں  لوگوں کی معیشت کو بہتر بنانے کے لئے بہت سے اقدامات کیے ہیں، جن میں کسانوں ، گلہ بانوں اور خانہ بدوشوں کے لے رہائشی منصوبوں کی منصوبہ بندی شامل ہیں. اس کے علاوہ، حکومت ان لوگوں کے لئے مواقع فراہم کیے ہیں جو کہ  انتہا پسندانہ خیالات کے حامل تھے لیکن مجرمانہ سرگرمیوں میں ملوث نہیں تھے کوتربیتی مرکز میں پیشہ ورانہ تعلیم دی، اور معاشرے میں واپس آنے کے لئے ان کی مدد کی.جس کے بعد اس علاقے میں ترقی کے ساتھ اور خوشحالی ظاہر ہوتی ہے. ترقی میں سماجی زندگی اور معاشرے کے تنظیمی ماڈل بھی شامل ہیں. مستقبل کے سنکیانگ میں سماجی ڈھانچے اور اخلاقیات کو زیادہ کامیابیاں ملیں گی

对于不发达的少数民族地区,政府曾经采取过许多优惠政策,比如升学。少数民族学生的录取分数线要比汉族学生有很大幅度的降低。但即使如此,他们中考上北大、清华这些学校的也不多。中国实行计划生育40年,少数民族不受这一计划的影响,这使少数民族的人口在快速增加。但是,由于经济不发达、教育落后,他们生的越多就越贫穷。若要使这些贫困人口真正参与到现代化的进程中,必须发展经济、改善教育。除本民族语言外,还要学习国家通用语言和外语,以便掌握和现代工业有关的技能,使自己有生存的基础,也使自己能够判断,什么是正确的人生观、价值观。

The government has adopted many preferential policies in the underdeveloped minority areas and the admission scores of minority students are much lower than Han students. Even so, few minority students can be admitted to Peking University and Tsinghua University. China has implemented family planning policy for 40 years, and ethnic minorities are not affected by this plan, so it has a rapid increase in the population of ethnic minorities. However, due to the underdeveloped economy and backward education, the more they are born, the poorer they are. To make these poor people truly participate in the process of modernization, it is necessary to develop the economy and improve education. In addition to their own languages, they must also learn the national language and foreign languages in order to master the skills related to modern industry, so that they can have a basic condition for survival, and also enable themselves to judge the correct outlook on life and values.

حکومت نے اقلیتی  علاقوں کے طلباء کے لءے  بہت سی ترجیحی پالیسیوں کو اپنایا ہے اور ان کو ہان طلباء کے مقابلے میں اقلیتی طلباء کے داخلہ کا میرٹ بہت کم کیا ہے. یہاں تک کہ، چند اقلیتی طالب علموں کو  پیکنگ یونیورسٹی اور شنگھائی یونیورسٹی میں داخلہ دیا گیا   ہے. چین نے گزشتہ 40 سالوں میں خاندانی  منصوبہ بندی کی پالیسی پر عملدرآمد کیا ہے، لیکن اس منصوبہ بندی سے اقلیتوں کو متاثر نہیں کیا گیا ، لہذا اقلیتوں کی آبادی میں تیز رفتار اضافہ ہوا. تاہم ان کی غربت کی بڑی وجہ غیر ترقی یافتہ معیشت اور پسماندہ تعلیم  ہے۔ ان  غریب افراد کی  ترقی کے لے ضروی ہے کہ ان کو جدید تعلیم ا  اور   قومی دھارے میں لانے کی ضرورت ہے اور ان کی  معیشت کو فروغ دیا جاءے. ان کو اپنی زبانوں کے علاوہ، انہیں جدید صنعت سے متعلق مہارت حاصل کرنے کے لئے قومی زبان اور غیر ملکی زبانیں بھی سیکھانا لازمی ہے، تاکہ وہ بہتر زندگی اور زندگی کا صحیح نقطہ نظر کا  بھی فیصلہ کرسکیں

西方的批评为什么虚伪

Why western criticism is so hypocritical?

مغربی تنقید منافقت پر مبنی کیوں ہے؟

关于人权,西方强调的是以“自由”为主体的政治权利。中国认为,“人民生活幸福才是最大的人权”。要使人民生活幸福,边远地区的住房、水电、医疗、交通、教育、文化需要大幅度改善,需要做实事而不是讲空话。政府为改善少数民族衣食住行等基本生活状态,提供基本的发展机会、发展能力和依法进行权益保护的努力,是一种新的治理方式的尝试。新疆的实际问题和他们解决问题的方法才是最值得外界关注的。

Regarding human rights, the West emphasizes on political rights with freedom, but China believes that the happiness of people is the greatest human right. In order to improve people’s living conditions, housing, water and electricity, medical care, transportation, education and culture need to be greatly improved in remote areas, and the government needs to do practical things instead of talking to realize those targets. It is also a new way of governance for the government makes efforts to improve basic living conditions and to provide basic development opportunities, capabilities and legal protection of rights and interests. The practical problems in Xinjiang and methods of solving problem are the main concern in the world.

انسانی حقوق کی تشرح مغرب کے مطابق یہ ہے کہ مغرب آزادی کے ساتھ سیاسی حقوق پر زور دیتا ہے، لیکن چین کا خیال ہے کہ لوگوں کی خوشحالی سب سے بڑ ا انسانی حق ہے. لوگوں کے حالات زندگی کو بہتر بنانے کے لئے، رہائش، پانی اور بجلی، طبی سہولیات، نقل و حمل، تعلیم اور ثقافت دور دراز علاقوں میں بہتری کی ضرورت ہے، اور حکومت ان مقاصد کو سمجھنے کے بجائے عملی کام کر رہی ہے. یہ حکومتی حکمت عملی کا نیا طریقہ بھی ہے کیونکہ حکومت بنیادی حالات زندگی کو بہتر بنانے اور بنیادی ترقی کے مواقع، صلاحیتوں اور حقوق اور مفادات کے قانونی تحفظ فراہم کرنے کی کوشش کررہی ہے. دنیا کو  سنکیانگ میں عملی مسائل کو حل کرنے کرنے کے بارےمیں تشویش ہونی چایءے

西方的价值观来源于他们的经历、习惯和思维定势,但事实表明,它们并不能套用在中国身上。新疆对改善民生的侧重是中国的方法,中国脚踏实地的做法,40年里已经使8亿人口脱贫,对世界减贫贡献率70%。新疆现在提出:在通往现代化的路上一个民族都不能落下,2020年要实现全部脱贫。这是看得见、摸得着的,而西方只会以宗教自由和人权批评新疆的治理,显得虚伪了。

Western values are derived from their experience, habits and mindsets, but the facts show that those values cannot be applied to China. The approach with Chinese characteristics has been adopted in Xinjiang to improve people’s livelihood. Chinese down-to-earth approach has lifted 800 million people out of poverty in last 40 years and contributed 70% to the world’s poverty reduction. Xinjiang also proposes that no nation can lag behind in modernization, and poverty alleviation will be realized in 2020. Those achievements are visible and tangible, and the Western criticism is hypocritical because they can only criticize Xinjiang’s governance with religious freedom and human rights.

مغربی اقدار کے تجربات سے یہ بات ثابت ہوی ہے کہ ان اقدار کو چین پر لاگو نہیں کیا جا سکتا. چینی کا اپنا نظام  اور نقطہ نظر ہی یہاں کےلوگوں کی معیشت کو بہتر بنانے کے لئے سنکیانگ میں اپنایا گیا ہے. چینی کی حقیقت پنسدانہ پالیسی کے نتیجے میں  پچھلے 40 سالوں میں  800 ملین افراد کو  نے غربت سے باہر نکالا ہے اور دنیا کی غربت میں 70٪ تک کمی کرنے میں حصہ لیا ہے. سنکیانگ میں یہ بھی تجویز دی ہے کہ کوئی قوم جدیدیت کے بغیر نہیں رہ سکتی، اور 2020 میں غربت کا خاتمہ  ہو جائے گا. یہ کامیابیاں واضح انداز میں نظر آ  رہی ہیں، اور مغربی تنقید منافقت پر مبنی ہے کیونکہ  مغرب کے پاس  صرف مذہبی آزادی اور انسانی حقوق کے نام کے علاوہ سنکیانگ میں طرز حکمران پر تنقید کا کوی دوسرا راستہ نہیں ہے

西方对新疆治理的批评反映出一种固有的观念:正确的政治方式不会出自中国。那些即有的不变的自由主义“普世价值”观仍然是至高无上的。认为有一个欧洲或北美式的国家治理,社会自然会获得稳定富足和繁荣。实践已经证明,这种想法多么幼稚,无非是凌空蹈虚,不接地气。

From the western criticism on Xinjiang’s governance, it reflects an inherent notion that the correct political approach can not come from China and those unchanging views of liberal universal values is still supreme. It is also that society will naturally be stable and prosperous if there is a European or North American national governance system. But practice has proved that this idea is too naive and ungrounded.

سنکیانگ کی طرز  حکمرانی پر مغرب کی تنقید اس تصور کی عکاسی کرتی ہے کہ درست سیاسی نقطہ نظر چین سے نہیں آسکتا ہے اور مغرب کے لبرل نظریات ہی اعلی ہیں.اور اگر یورپ اور شمالی امریکہ کے گورننس سسٹم کو اپنایا جاءے تب ہی خشحالی اور استحکام آ سکتا ہے لیکن تجربہ ثابت کرتا ہے یہ کہ اس کے انتہاہی سنگین اور بے بنیاد نتاءج برامد ہوءے ہیں

什么样的治理才是好的国家治理呢?二战结束以后,和美国结盟的一些国家的确出现过繁荣。而冷战结束后,西方舆论宣称除了自由主义的西方民主之外,世界并无其它道路可寻。但是,那些随后照搬西方制度的国家却出现了太多治理失败。在治理上,中国认为“发展才是硬道理”,并用发展的方式看待和解决前进中问题,其成就是有目共睹的。

What kind of governance is appropriate for a country? By the end of the World War II, some countries formed alliances with the United States have indeed experienced prosperity. After the Cold War, the West claimed that there is no other way to develop for the world except the liberal western-democracy. However, those countries that subsequently copied the Western system have experienced too many governance failures. In terms of governance, China believes that development is the last word and China always treats and solves problems in the process of development. Its achievements are obvious to all.

کسی ملک کے لئے کس طرح گورننس مناسب ہے؟ دوسری عالمی جنگ کے اختتام تک، بعض ممالک نے امریکہ کے ساتھ اتحاد قائم کیا ہے جو واقعی خوشحالی کا تجربہ کر چکا تھا . سرد جنگ کے بعد، مغرب نے دعوی کیا کہ لبرل مغربی جمہوریت کے سوا دنیا کے لئے ترقی کا کوئی دوسرا راستہ نہیں ہے. تاہم، جن ممالک نے بعد ازاں مغربی نظام اپنایا ان میں بہت سی حکومتیں ناکام ہوءیں . چین کا خیال ہے کہ حکمرانی کی ایک ہی شرط ہے اور وہ ہے   ‘’ترقی۔ اور چین ہمیشہ ترقی کرتا ہے اور ترقی کے عمل سے ہی مسائل کو حل کرے گا. یہ کامیابیوں  بالکل واضح ہیں

褊狭的视角无法解释正义的性质,无法区分合法的政治权威和暴政之间的区别。西方总是有人预言中国的政治经济政策会失败,但实践却证明这些政策符合中国实际,效果也很好。新疆的治理会成为又一个具有典范意义的事例。

A narrow perspective cannot explain the nature of justice and cannot distinguish between legitimate political authority and tyranny. Some people in the West always predict that Chinese political and economic policies will fail, but practice has proved that these policies are accord with Chinese reality and the desired effects has been reached. The governance of Xinjiang will become another significant example.

ایک تنگ نقطہ نظر انصاف کی نوعیت کی وضاحت نہیں کرسکتا اور قانونی سیاسی اقتدار اور ظلم کے درمیان فرق نہیں کر سکتا. مغرب میں بعض تجزیہ کار یہ کہتے ہیں کہ چین کی سیاسی اور اقتصادی پالیسیاں ناکام ہو جایءں گی، لیکن عملاّ ثابت ہوا ہے کہ یہ پالیسیاں چینی حقیقت کے مطابق ہیں اور مطلوبہ نتاءیج تک پہنچ چکے ہیں. سنکیانگ کی حکومت اس کی کامیاب مثال ہے۔

LEAVE A REPLY