مسلمانوں کی غیرت مر گئی

0
Rajab Ali Raja
  رجب علی راجا  دھمیال راولپنڈی
کشمیر  میں ظلم اور بربریت کی  انتہا ہو رہی ہے یعنی چار ماہ سے ان کو گھروں میں بند کیا ہوا ہے وہ ہمارے مسلمان بھائی کیا کھا
رہے ہوں گے  آپکو پتہ ہے مزدور ایک دن کام نہ کرئے تو اس کے گھر کھانے کی کمی ہو جاتی ہے ایک نوکری پیشہ شخص ایک ماہ کام پر نہ جائے تو اس کے گھر میں فاقے شروع ہو جاتے ہیں  لیکن ہمارے مسلمان بھائی چار ماہ سے گھروں میں بند ہیں آپ سوچ سکتے ہیں ان کے گھر کی حالت کیا ہو گی  کیا ہم مزید اپنے مسلمان بھائیوں کے مرنے کا انتظار کریں گے کیا ہم بھارت کے ساتھ ہیں کے سارا مقبوضہ کشمیر بھوک سے مر جائےپورا مقبوضہ علاقہ بھارت کے ہاتھ چلا جائے یعنی بھارت کی ایک کالونی بن جائے تو ہم خوش ہوں گے  کیا ہم میں ایمان نہیں حدیث نبوی( ظلم ) برائی کو دیکھو تو ہاتھ سے روکو اگر نہیں روک سکتے تو  زبان سے روکو اگر نہیں روک سکتے تو دل میں برا کہو یہ ایمان کا سب سے کمزور درجہ ہے کیا ہم آخری درجہ پر بھی نہیں کیا اربوں مسلمانوں میں ایک بھی طارق بن زیاد نہیں کیا ایک بھی محمد بن قاسم ۔ٹیپو سلطان  ۔شیر شاہ سوری ۔محمود غزنوی نہیں کیا ماووں نےمرد جننے بند کر دیے ہیں کیا آج تمام مسلم ممالک میں خواتین اور مخنص پیدا ہونے شروع ہو گے کیا ہم نے ایٹم بم دکھانے کے لیے بنایا ہے  کیا طالبان جو دنیا کی سپر پاور کو شکست دے سکتے ہیں  غیر مسلم کے ہاتھوں بک گے  کے انھوں نے مسلمانوں کو مارنا شروع کر دیا ہے اور ان کی غیرت کشمیر کی بہنوں کی عزت نیلام ہونے پر نہیں جاگ رہی کیا مسلمان حکمرانوں نےمرنا نہیں ہے جو کشمیری بھائی کی موت پر آواز حق بلند نہیں کر پا رہے  کیا ہم مرد نہیں ہم اپنا حصہ کس حد تک ڈال سکتے ہیں
 غلامی میں نہ کام آتی ہے تدبیریں نہ شمشیریں
جو ہو ذوق یقین پیدا تو کٹ جاتی ہیں زنجیریں
انداز بیاں گرچہ شوق نہیں ہے
 شاہد کے تیرے دل میں اتر جائے میری بات

LEAVE A REPLY